Author: Qurratulain Hyder


ISBN:
Pages:
Description: ‚مرگ انبوہ واقعی ایک جشن ہے۔‘

‚آدمی کی عادت ہے اسے اس کی جنت سے نکالو تو وہ اپنے لیے بری بھلی ایک اور جنت بنا لیتا ہے’،
میری نظر میں اس ناول کواگر اس ایک فقرہ میں بیان کیا جائے تو غلط کوشی نہ ہوگی۔

خوبصورت (الہیاتی ) خیالات سے لبریز نثر ، حیاتیاتی و اندرانی روحانی کشمکش ، ناسٹلجیاء (ماضی سے عقیدت) بنگالی نظریاتی و ثقافتی پس منظر، شورش انگیز بنگالی وقت (ہندوستان سے پاکستان اور پھر بنگلہ دیش کے بعد ) ، عصبیاتی پیچیدگی ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ناول کے چند موضوعات و خصوصیات۔

“شعراء کی موضوع ِ سخن، افسانہ نگاروں کی ہیروئن، جذباتی چترکاروں کی تصویر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بنگال کی عورت۔ سدا دکھ سہنے والی، صابر و شاکر بے چاری‘

“وقت اور الفاظ انسان کے شکاری ہیں۔ “

انسانی نفسیات کل بھی وہی تھی جو آج ہے فرق صرف اتنا ہے کہ ماضی کی ژولیدگی اور پیچیدگی کو مختلف سائنسی و معاشرتی عوامل سے ذہنی سمجھ بوجھ کی استقرائ حالات میں ڈھال دیا گیا ہے۔ اور یہ ناول اس فہم کی بنگالی تہذیب کے تناظر میں عکاسی ہے۔

ٹھوس جزباتی کاملیت و انسانی تہذیبی رواداری بذاتِ خود انسانیت کی بقا ہے،
‚مگر جوانی کی اکڑ اور اپنے اصول پرستی کے زعم میں ہم یہ نہیں سمجھ پاتے کہ ہمارے برگوں کےبھی جزبات ہیں۔ ان کی بھی اندرونی جذباتی زندگی ہے۔ انہوں نے بھی شکستہ دلی کا سامنا کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “

کرداروں کو ترتیب اور جس ضابطے سے کہانی میں ڈھالا گیا ہے ، لائقِ تحسین ہے۔

بلاشبہ اردو کا ایک خوبصورت ناول۔
Pricing and information is accurate to the best of my knowledge at time of Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر posting.Catawbas, their service sought Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر by the English army, II.Thanks Stephan for the eye opening experience and taking Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر the time to talke with me.I felt like she was too Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر young to fully understand what I was doing.Cassio and Roderigo are borne off. Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفرIn the rear, the house, not very large, showed the six windows Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر of its facade, half hidden by vines and rosebushes.Every sight Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر on every gun had to be tested and checked up, and it was tedious work.If it were not that we do not want them to know the way to the wady I should say that we could venture to sally out and march back, Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر but that would cost us a good many lives, for the horsemen could ride on ahead, dismount, open fire on us from the sand-hills, and be off again on their horses when we went up to attack them.Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر Accordingly, neither the President.“Send a horseman to meet them,“ he said, „with the message, ‚Is all well?'“ Forth flew the rider, and cried to the rushing escort, „The king Akhir-e-Shab Kay Hamsafar / آخر شب کے ہمسفر asks, ‚Is all well? Is it peace?'“ For probably the anxious city hoped that there might have been some victory of the army against Hazael, which would fill them with joy.